23:51:21
ایمس نے مانا ہوم آئیسولیشن کورونا مریضوں کے پاس ہمیشہ رہنی چاہئے یہ ایک چیز،نہیں تو ہو سکتی ہے موت
 174
10 Aug, 2020 05:01 pm

نئی دہلی :ایک طرف جہاں ہندوستان میں کورونا وائرس کے نئے معاملے کی تعداد بڑھررہی ہے۔ اس کے باوجود قومی راجدھانی دہلی میں کورونا وائرس کا گراف قریب قریب سدھرتا نظر آرہا ہے۔ اس خطرناک متعدی بیماری کے خلاف دہلی حکومت نے اپنی لڑائی میں واضح سدھار کیا ہے ۔ دہلی میں کورونا وائرس کے اب تک 10،000سے زیادہ ایکٹو معاملے ہیں اور اب

تک  4،098لوگوں کی موت ہوچکی ہے ۔ دہلی میں ہوم آئیسولیشن میں رہ رہے لوگوں کی تعداد 5،372ہے جو کورونا وائرس کے ایکٹو معاملے کے تقربیاً 50فیصد ہے ۔ دہلی میں جن لوگوں کو کووڈ-19کے معمولی سے علامت ہے انہیں عام طور پر ہوم قرنٹائن کیا گیا ہے اورانہیں دوائیاں دی جارہی ہیں۔ اس لئے ہوم آئیسولیشن میں رہ رہے لوگوں کے لئے علاج کا صیح طریقہ طے کرنے کے لئے آل انڈیا انسٹیٹوٹ آف میڈیکل سائنس (ایمس)کے ڈاکٹر نے گھر پر رہنے والے کووڈ-19مریضوں کےلئے ان کا ذکر کیا ہے ۔ایکسپٹ نے ان مریضوں سے اپنے آکسیجن کے لیول پر نظر رکھنے کی اہمیت بھی واضح کی ہے تاکہ کسی بھی خطرے کو ٹالا جاسکے ۔ ساتھ ہی یہ ان لوگوں کے لئے ضروری ہے جو ہوم آئیسولیشن میں رہ رہے ہیں۔
کیا کہتا ہے کہ ایمس کی ’ہائپوکسیمیا‘کیس اِسْٹَڈی کووڈ-19قومی کلینیکل گراؤنڈ راؤنڈ کا ایک انٹرایکٹو سیشن میں دہلی واقع ایمس کے ماہر ڈاکٹروں نے کووڈ-19مریضوں کے لے علاج کے طریقہ ہر بحث کی خاص کر جو ہوم قرنٹائن میں ہیں۔ ایک نیوز ایجنسی میں شائع خبر کے مطابق ڈاکٹروں نے بخار،گلے میں خراش اورسانس پھولنے والی 35سال کی خواتین کی کیس اسٹڈی کو مشترکہ کیا۔ خواتین کو تب اسپتال نے جایا گیا جب اس کا آکسیجن لیول 67فیصد تک گر گیا تھا ۔اس مریض کو بعد میں نوول کرونا وائرس ٹیسٹ پازیٹو پایا گیا ۔
کم آکسجین لیول خطرناک کیوں؟
ماہرین کا کہنا ہے کہ لوگوں کو اس بات کا خیال رکھنا چاہئے کہ ہیپی ہائیپوکیشیا یا سائلنٹ ہائیپوکیشیا ایک ایسی حالت ہے جب کسی کووڈ-19مریض کو بناکسی خاص پریشانی ہوئے۔ اس کا بلڈ آکسیجن لیول غیر معمولی طور پر کم ہوتا چلا جاتا ہے اس معاملے میں اگرچہ آکسیجن کی سطح خطرناک حد تک کم ہوجاتی ہے ،مریض سانس لینے میں دشواری یا سانس کی پریشانیوں کی کوئی دوسری واضح علامت محسوس نہیں کرتا ہے۔ علامات کے بغیر یا عام طور پر مریض مریضوں کے جسم میں آکسیجن کی سطح میں کمی کی یہ خاموش وجہ کارڈیک گرفت ہوسکتی ہے۔
پلس آکسیمیٹر مریضوں کو گھر میں قرنٹائن رکھنا چاہئے
یہی وجہ ہے کہ طبی ماہرین اور ایمس کے ڈاکٹر کووڈ-19 کے مریضوں پر قریبی نگرانی کرنے پر زور دے رہے ہیں چاہے وہ گھر سے الگ تھلگ ہی ہوں۔ عام طور پر کووڈ میں، مریضوں کو تشخیصی خصوصیات میں بہت ساری خصوصیات کے بغیر ہائپوکسیمیا کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔
گھر پر موجود کورونا وائرس کے مریضوں کی آکسیجن کی سطح کی نگرانی کے لئے پلس آکسیمٹر استعمال کرنے کا مشورہ دیا جاتا ہے۔ یہ چھوٹا سا آلہ،جسے کسی شخص کی انگلی، پیر یا کان سے لگایا جاسکتا ہے،تاکہ خون میں آکسیجن کی فیصد کو ناپ سکے۔
آکسیجن کی سطح کو کب کم سمجھا جاتا ہے؟
اگر آپ اپنی آکسیجن کی سطح کی پیمائش کے لئے پلس آکسیمٹر استعمال کررہے ہیں تو، 95 ایس پی او 2 سے نیچے کی کوئی بھی رینڈگ کم اور غیر معمولی سمجھی جاتی ہیں۔ اگر آپ کی سطح 93 ایس پی او 2 سے نیچے آتی ہے تو،آپ کو پھر بھی اپنے ڈاکٹر سے رجوع کرنا چاہئے،یہاں تک کہ اگر آپ کو سانس لینے میں کوئی دقت محسوس نہیں ہوتی ہے۔ نبض آکسیمٹر کی مدد سے اپنے آکسیجن کی سطح کی پیمائش کرنے کا صحیح طریقہ سیکھنا بھی ضروری ہے تاکہ آپ غلط پیمائش پر بھروسہ نہ کریں۔
بشکریہ :onlymyhealth

Original text