23:51:21
CAA:کیرالہ اور کولکاتہ میں70 لاکھ لوگوں نے بنائی انسانی زنجیر
 219
27 Jan, 2020 01:22 pm

ترواننت پورم ،کولکاتہ :سی پی ایم کے زیرقیادت بائیں جمہوری محاذ (ایل ڈی ایف) کے ذریعہ اتوار کے روز قصاراگوڈ سے تمل ناڈو کی سرحد تک پھیلنے والی ایک انسانی زنجیربنانے کا اہتمام کیا گیا، جس کی وجہ سے وہ شہریت ترمیمی قانون (سی اے اے)کے خلاف سب سے بڑا احتجاج ہے، جس میں 70 لاکھ افراد نے حصہ لیا۔ لوگ اس میں شرکت کےلئے بڑی تعداد میں گھروں سے باہر آئے۔ سہ پہر 3:30 بجے جانچ کے بعد یہ سلسلہ شام 4 بجے قومی شاہراہ کے ساتھ 600 کلومیٹر کے فاصلے پر قصاراگوڈ سے ترواننت پورم تک شروع ہوا۔
پہلے آئین کو پڑھا گیا اور بعد میں موجود تمام لوگوں نے حلف لیا اور کہا کہ آئین کے تحفظ کےلئے اپنی جانوں کا نذرانہ پیش کرنا چاہئے۔ سی پی آئی نے انسانی زنجیر کے ذریعہ مخالفت کا تصور کیا تھا۔ کساراگوڈ کے شمالی مقام پر ایس رام چندرن پیلی اس سلسلے میں پہلے نمبر پر تھے ، جبکہ تامل ناڈو کی سرحد پر کلی اکیلا میں جنوبی کنارے پر پارٹی کے رکن ایم اے بچی موجود تھی۔ بچی نے کہاکہ کیرالہ نے ہمیشہ بہت سے مظاہرے کیے اور ملک کو دکھایا کہ سخت احتجاج کے ذریعے کیا ہوسکتا ہے۔کیرالہ کے علاوہ ہزاروں افراد نے 11 کلومیٹر لمبی انسانی زنجیر، کولکاتہ شہر کے شمال سے جنوب تک ترنگا لہراتے ہوئے ان لوگوں نے سی اے اے کی منسوخی کا مطالبہ کیا اور ہندوستانی آئین کو برقرار رکھنے کا عزم کیا۔ شرکابغیر کسی سیاسی وابستگی اور بینر کے دوپہر سے پہلے شہر میں 15 کھیلوں میں جمع ہوئے۔ ان کے اجتماع کےلئے یہ نامزد جگہ تھی اور انہوں نے گھڑی کے ٹھیک 12بجے ایک دوسرے کے ہاتھ تھام کر ایک انسانی زنجیر بنایا۔ ڈاکٹروں ، وکلا ، اساتذہ اور پروفیسرز جیسے اعلیٰ پیشہ ور افراد سے لے کر دوسرے کے گھروں میں کھانا پکانے اور برتن دھونے کے ذریعہ معاش کمانے والے افراد تک ہر ایک نے حصہ لیا۔ ہاتھوں میں ترنگا تھا، جبکہ دوسروں کے سینے پر قومی پرچم تھا۔ 15 منٹ تک جاری رہنے والی انسانی زنجیر جنوب میں جادھوپور یونیورسٹی میں مشہور انقلابی نیتا جی سبھاش چندر بوس کے مجسّمے سے لے کر شمالی کولکاتہ کے شمام بازار تک پھیلی ہوئی ہے۔ کولکاتا کے شہریوں کی طرف سے تمام برادریوں کے مذہبی فورم ، یونائیٹڈ انٹرفیتھ فاو¿نڈیشن آف انڈیا نے اس کا اہتمام کیا۔

Original text