23:51:21
فیکٹ چیک: دو ہزار بیس کی فرضی معلومات: سی اے اے مخالف مظاہروں سے لے کر کورونا وائرس اور کسان مظاہروں تک
 117
13 Jan, 2021 04:52 pm

نئی دہلی :سال 2020 غیرمعمولی اور حیرت انگیز واقعات سے بھرا ہوا تھا۔ جو خوش قسمت تھے،انہیں صرف اپنے آپ کو
گھر میں بند کرنا پڑا ،جب کہ غریبوں اور سہولیات سے محروم افراد کو طرح طرح کی ٹھوکریں کھانی پڑیں۔ اور بات صرف
گھر میں قید ہونے کی مجبوری کی ہی نہیں تھی۔ ۔ ہمیں اپنی جینے کی  زندگی تک کو بدلنا پڑا۔
2020 کو صرف کووڈ 19 کے لئے نہیں بلکہ فرقہ وارانہ فسادات،طلباء کے احتجاج، شہری حقوق کی تحریکوں اور
اقلیتوں کے ساتھ ناانصافی کے سال کے طور پر بھی یاد رکھا جائے گا۔
گزرا ہوا سال ہمیں یاد دلاتا رہے گا کہ مین اسٹریم میڈیا نے بھی گمراہ کن (غلط خبریں ) اطلاعات (انفومیشن) پھیلانے میں اپنا
کردار ادا کیا۔ ٹی وی اسکرین پر چیختے چلاتے نیوز اینکرز نے لاکھوں لوگوں تک غلط انفومیشن پھیلانے کا کام کیا۔ سال کے
آغاز میں سی اے اے مخالف مظاہروں سے لے کر کسانوں کے 2021 میں جاری مظاہروں تک،کئی مین اسٹریم  میں شامل
بہت سے صحافی غلط معلومات پروسنے کا مورچہ مورچہ سنبھالتے ہوئے نظر آئے یا دیکھائی دے ۔ نمٹنے کے لئے دیکھے
گئے ہیں۔

دو ہزار بیس کی سب سے گمراہ کن اطلاعات 

اس رپورٹ میں،آلٹ نیوز نے پچھلے سال کی سب سے بڑی گمراہ کن خبر کو واضح کیا ہے۔ ذیل میں انہیں ذیلی زمرے میں
تقسیم کیا گیا ہے۔

اینٹی سی اے اے پروٹسٹ،دہلی فسادات اور جے این یو میں تشدد سے متعلق گمراہ کن معلومات۔ 
  کورونا وائرس اور مسلم کمیونٹی کے بارے میں غلط معلومات۔
  کووڈ 19 کے سبب لاک ڈاؤن کے دوران تارکین وطن مزدوروں کے بارے میں گمراہ کن میڈیا کے ذریعہ پھیلایی گیی غلط
رپورٹ ۔
 کووڈ 19 کے حوالے سے طبی شعبوں سے متعلق غلط معلومات۔
 ہندوستان چین تنازعہ کے بارے میں جھوٹے میڈیا کے دعوے۔
  کسانوں کی تحریک سے متعلق غلط اطلاعات فراہم کی گئی ۔
  'لوجہاد' کو قانونی شکل دینے کی کوششیں۔

جامعہ اور جے این یو میں سی اے اے کے احتجاج ،دہلی فسادات اور تشدد سے متعلق بہت سی غلط معلومات پھیلائی گئیں

وبا پھیلانے سے دو ماہ قبل،شہریت ترمیمی قانون (سی اے اے) کے خلاف مظاہرے،جامعہ ملیہ اسلامیہ اور جواہر لال نہرو
یونیورسٹی میں تشدد اور اس کے بعد دہلی کے ہنگامے ہوئے۔ اور اس دوران،سوشل میڈیا سے لے کر ٹی وی تک ان واقعات سے
متعلق متعدد بار غلط اور گمراہ کن معلومات لوگوں تک پہنچ گئیں۔

سی اے اے مظاہروں کو بدنام کرنے کے لئے،سب سے بڑی غلط فہمی یہ کہہ کر پھیلائی گئی کہ مظاہروں میں شریک خواتین
کو پیسہ دیا گیا۔ بی جے پی کے قومی سوشل میڈیا انچارج امت مالویہ نے ایک ویڈیو شیئر کی تھی جس میں 'اسٹنگ' آپریشن کا
دعوی کیا گیا تھا اور کہا تھا کہ خواتین میں 500-500 روپے تقسیم کیے جارہے ہیں۔ اس جھوٹے دعوے کا انکشاف آلٹ
نیوز اور نیوز لونڈری نے مل کر کیا۔ ایک طرف،ٹائمزناؤ ،ریپبلک بھارت اور انڈیا ٹوڈے جیسے مین اسٹریم میں آنے والے میڈیا
چینلز  'اسٹنگ' پر بحث کر رہے تھے،جب کہ پتہ چلا کہ یہ دہلی میں ایک دکان کے سامنے کھڑے 3 افراد کی طرف سے
پھیلائی گئی صرف افواہ ہے۔

اسی طرح ایک اور ویڈیو شیئر کرتے ہوئے یہ دعوی کیا گیا کہ مسلم کمیونٹی کے لوگ رشوت لے رہے ہیں۔ جب کہ حقیقت
میں، دہلی فسادات کے متاثرین کی ویڈیو میں مدد کی جارہی ہے۔

بی جے پی ممبران اور حامیوں کے ذریعہ شیئر کردہ اس ویڈیو کو اب بھی ان کی ٹائم لائن پر دیکھا جاسکتا ہے۔

فسادات کے کچھ ماہ بعد ،آلٹ نیوز نے ایک رپورٹ شائع کی جس میں ہم نے ایک شخص کا انٹرویو کیا۔ اس شخص نے دہلی میں
فرقہ وارانہ فسادات کے دوران متعدد اشتعال انگیز پوسٹیں کیں۔ اس رپورٹ سے پتہ چلتا ہے کہ کس طرح تعصب اور غلط
معلومات ایک دوسرے سے جڑے ہوئے ہیں۔ سودیش ٹھاکر،جو ہندو رکشا دل کے نام سے ایک کٹر ہندو گروہ سے وابستہ ہیں
،انہوں نے اسی ویڈیو بات کرتے ہوئے احتجاج کو برا بھلا کہا تھا۔ جس میں فسادات سے متاثرہ افراد کو امداد فراہم کی جارہی
ہے۔

اس کے علاوہ مسلم خواتین پر منشیات بیچنے اور جسم فروشی میں کے فرضی الزامات عائد کیے گئے تھے۔ یہاں تک کہ
لوگوں نے جامعہ اسکالر ساپھورہ زرگر کی حمل (پریگننسی) کو لے کر لوگوں نے ان کی شادی پر سوال ہی اٹھانا شروع کر دیا۔
سیپورہ نے اپنی ذاتی زندگی کو اپنی سیاست کے بیچ نہیں آنےدیا ۔ اس کے باوجود ، سوشل میڈیا پر ایسے  بہت سارے لوگ
موجود تھے جنہوں نے ان پر فحش اور جنس پر مبنی تبصرے کیے۔
ٹائمز ناؤ نے، ایک مسلمان ماب پر فائرنگ کرنے والے شخص کی ویڈیو شیئر کرتے ہوئے،یہ غلط دعویٰ کیا کہ گولی چلانے 
والا اینٹی سی اے اے  مظاہرین ہے۔

ہم نے اے این آئی کی CAA سے جڑی جانبدارانہ رپورٹنگ کے بارے میں بھی لکھا تھا۔ اے این آئی نے بیرون ملک میں صرف
سی اے اے کو ہی  مظاہروں کو کور کیا ،جب کہ انہوں نے بیرون ملک ہونے والے سی اے اے خالف مظاہروں کو مکمل طور
پر نظرانداز کیا۔

اسی طرح مین اسٹریم  میں آنے والے میڈیا نے دسمبر 2019 میں متعدد مواقع پر جامعہ تشدد سے متعلق گمراہ کن معلومات
فراہم کیں۔ جامعہ کوآرڈینیشن کمیٹی کی سی سی ٹی وی فوٹیج جاری کرنے کے بعد، انڈیا ٹوڈے کے ذریعہ دی گئی خبر کے
مطابق ، شرپسند ریڈنگ روم میں جمع ہوگئے تھے،جن کا پیچھا کرتے ہوئے  پولیس نے وہاں پہنچ گئی۔ چینل نے دکھایا کہ طلبا
دروازہ کو بلاک کررہے تھے، لیکن یہ نہیں دکھایا گیا کہ پولیس وہاں زبردستی داخل ہوئی پولیس انہیں کس  بے دردی سے
پیٹا۔ اس کے علاوہ، چینلز نے 2 مختلف فلور کے ویزول کو توڑ مراڑ کر دیکھایا۔

اس لٹری چارج کے دوران درجنوں میڈیا آؤٹ لیٹس اور حکومت نواز پورٹلز نے ایک طالب علم کے ہاتھ میں بٹوے کو پھتر
بتاتے ہوئے غلط رپورٹنگ کی۔

صرف یہی نہیں ، بہت سے صحافی 5 جنوری کی رات جے این یو میں ہونے والے تشدد سے متعلق غلط معلومات شیئر
کرنے میں شامل تھے۔ اے بی پی نیوز اور پرسار بھارتی کے وکاس بھدوریا نے یہ جھوٹا الزام لگایا تھا کہ بائیں بازو کی
جماعتوں نے پہلے اے بی وی پی پر حملہ کیا،جس کے بعد تشدد ہوا۔ لیکن ویڈیو میں دیکھا گیا کہ اے بی وی پی کا ممبراے آئی
ایس اے کے ممبر کو پیٹ رہا تھا۔

جے این یو تشدد پر دہلی پولیس کے ذریعہ 10 جنوری کو پریس کانفرنس میں پیش آنے والے تشدد کے بعد ڈی سی پی (کرائم)
جائے ٹکرری نے اس پورے واقعے کی تفصیل دی۔ انہوں نے مشتبہ افراد کی تصاویر والے پرچے بھی جاری کیے۔ آلٹ نیوز
نے پایا تھا کہ آر ایس ایس کے منظور شدہ اے بی وی پی ممبروں نے یہ پرچے سوشل میڈیا پر وائرل کیے تھے۔ ان کا ڈیزائن
اور پرنٹ وہی تھا جو ڈی سی پی کے ذریعہ دکھایا گیا پرچہ پر دکھایا گیا ہے۔

آلٹ نیوز کو جے این یو کیمپس میں نقاب پوش خاتون کے بارے میں بھی پتہ چلا جو تشدد کے دوران وہاں موجود تھی۔ پائے
گئے شواہد اور رابطوں کی بنیاد پر ، آلٹ نیوز نے تصدیق کی کہ یہ نقاب پوش خاتون اے بی وی پی کی ممبر کومل شرما تھی۔

اسی طرح ،جے این یو کا ایک طالب علم انڈیا ٹوڈے سے یہ اعتراف کرتے ہوئے پکڑا گیا کہ وہ 5 اور 6 جنوری کے درمیان
تشدد میں ملوث تھا۔ اس کے بعد،آلٹ نیوز کو اپنی تفتیش میں پتہ چلا کہ یہ طالب علم اے بی وی پی سے وابستہ تھا۔
ایک بار پھر ہم سی اے اے اور اس کے بعد ہوئے دہلی فسادات کے خلاف مظاہروں کا رخ کرتے ہیں۔ وزیر داخلہ امت شاہ نے
ایک "فیکٹ فائنڈنگ" رپورٹ کو قبول کیا جو غلط معلومات سے بھری ہوئی تھی اور اسی کے ساتھ ہی متعدد مواقع پر آپ انڈیا کو
بھی اپنا ماخذ بتایا تھا۔

اسی دوران ، کچھ مواقع ایسے بھی آئے جب سی اے اے کے حامی لوگوں کے خلاف بھی گمراہ کن معلومات پھیلائی گئیں۔ مثال
کے طور پر، ظفرآباد میں بندوق بردار کو سی اے اے کی حامی پارٹی قرار دیا گیا تھا اور کچھ دعوے ہیں کہ انہیں بی جے پی
دہلی کے رہنما کپل مشرا کے ساتھ دیکھا گیا تھا۔

بہت سے لوگوں نے فسادات کے دوران پولیس پر توڑ پھوڑ کا الزام عائد کرتے ہوئے ایک پرانا کلپ شیئر کیا۔ یہ ویڈیوکلپ پرانا
تھا،لیکن فسادات کے دوران پولیس کی ایک وحشیانہ حرکت کیمرے میں قید ہوگئی، جس میں کچھ پولیس اہلکار کچھ زخمی
نوجوانوں کو زبردستی قومی ترانہ گانے پر مجبور کررہے تھے۔

کورونا وائرس سے متعلق گمراہ کن معلومات اور مسلم کمیونٹی کو بدنام کرنے والی معلومات کا شیئر کی گئی۔

 دہلی کا نظام الدین کویڈ 19 کا ہاٹ اسپاٹ بن گیا،تب سوشل میڈیا پر غلط اطلاعات اور پوسٹوں کی بھرمار ہوگئی تھی۔ جس میں
مسلم برادری کو وائرس پھیلانے کا الزام لگایا گیا۔

ایک بزرگ مسلمان ٹھیلے والے  کے خلاف ایف آئی آر درج کروائی گئی کیوں کہ اس نے گاڑی پر پانی کی بوتل سے ہاتھ دھو
لیا تھا۔ ایک طرف ایف آئی آر میں لکھا گیا تھا کہ بزرگ نے پھلوں پر پانی کی وہی بوتل چھڑکی تھی،جب کہ اسے سوشل میڈیا
میں بگاڑتے ہوئے یہ فرضی دعویٰ گیا تھا کہ اس ٹھیلے والے نے   پھل پر پیشاب  چھڑکا گیا تھا۔

صوفی رسومات کی ایک ویڈیو شیئر کی گئی جس میں کہا گیا ہے کہ مسلم کمیونٹی سے تعلق رکھنے والے افراد کورونا وائرس
پھیلانے کے لئے جان بوجھ کر چھینک رہے ہیں۔

اسی طرح سے کئی دیگر ویڈیوز شیئر کی گئیں اور غلط انفیکشن پھیلانے کے الزامات لگائے گئے - برتن چاٹنے ، بکھرے نقد
نوٹ اور کھانے میں تھوکنے جیسے دعوے کی ویڈیوز۔

گجراتی زبان میں ایک آڈیو بھی وائرل ہوا۔ سورت میں مسلمان تاجروں پر کورونا وائرس پھیلانے کا غلط الزام لگایا گیا تھا۔

ایک رپورٹ میں ،ہم نے بتایا کہ کیسے پیٹرول پمپ پر ایک معذور مسلمان شخص سے نوٹ گرے اور صحافی وکاس بھڈوریا اور
ٹی وی 9 گجراتی سمیت بہت سے سوشل میڈیا صارفین نے اسے کورونا انفیکشن سے جوڑ دیا۔ اس شخص کے ہاتھ میں چوٹ
دکھانے کے باوجود کوئی ٹویٹ ہٹایا نہیں گیا۔

ایک اور علاقائی میڈیا آؤٹ لیٹ پبلک ٹی وی نے فرضی خبریں چلائیں کہ کرناٹک میں مسلم نوجوانوں نے 'مذہبی وجہوں' کی بناء
پر کورونا ویکسین لینے سے انکار کردیا۔ اوپن انڈیا اور مائی نیشن نے بھی یہی دعوی کیا۔ یہ دعوی صرف ایک مقامی شہری
کی بات پر کیا گیا ہے اور چینل نے کسی بھی مقامی صحت کارکنوں سے بات کرنے کی زحمت گوارا نہیں کی۔ جب آلٹ نیوز
نے وہاں کے حکام سے رابطہ کیا تو پتہ چلا کہ یہ دعوی سراسر غلط ہے۔

ایسا ہی ایک اور دعوی ہندی کی دکانوں نیوز 24 ،پنجاب کیسری،امر اُجالا،ٹائمز ناؤ ہندی اور نیوز 18 نے کیاتھا۔ انہوں نے
غلط رپورٹنگ کرتے ہوئے کہا تھا کہ کورونا کی وبا کے دوران ایران ،اٹلی اور چین کی مسلم کمیونٹی کے غیر ملکی شہری
بہار کی ایک مسجد میں چھپے تھے۔ معلوم ہوا کہ وہ لوگ ہندوستان میں کورونا کے کیس آنے سے پہلے ہی کرغزستان سے
آچکے تھے۔

اس وبا میں،متعدد مواقع پر مسلم برادری کے درمیان گمراہ کن دعوے پھیلائے گئے تھے ،جیسے کہ مسلم کمیونٹی کو کورونا
نہیں ہوسکتا ہے۔ وائرل پیغام میں دعوی کیا گیا ہے کہ غیر مسلم نماز پڑھ رہے ہیں، امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے نماز پڑھی
اور چین نے وبا کے پیش نظر قرآن مجید پر پابندی ختم کردی۔

بحرانوں سے دوچار تارکین وطن کارکنوں کی میڈیا کی گمراہ کن اطلاعات

مرکزی حکومت کی طرف سے کووڈ 19 کے انفیکشن کی روک تھام کے لئے لاک ڈاؤن نافذ کرنے کے بعد لاکھوں کارکنوں کو
اپنے دیہات لوٹنا پڑا۔ بہت سے مین اسٹریم میں آنے والے میڈیا چینلز نے اس بارے میں غلط معلومات نشر کیں۔ 14 اپریل کو
ممبئی پولیس نے 11 افراد کو گرفتار کیا،جن میں اے بی پی مانجھا کے رپورٹر راہول کلکرنی بھی شامل ہیں۔ یہ الزام لگایا گیا
تھا کہ وہ مسلم کمیونٹی کے بارے میں افواہوں کو پھیلانے میں شامل تھے،جس کی وجہ سے باندرا اسٹیشن کے قریب قریب 2
ہزار تارکین وطن مزدور جمع ہوگئے تھے۔ اس رپورٹر نے ایک  انٹرنل  دستاویز کا حوالہ دیا تھا جس میں یہ دعوی کیا گیا تھا
کہ مہاجرین کو خصوصی ٹرینوں کے ذریعہ گھر بھیج دیا جائے گا۔ اے بی پی گروپ کے ہندی چینل نے بھی اسے نشر کیا
اور لوگوں کے جمع ہونے کو 'سازش' قرار دیا۔ اے بی پی نے یہ اس لئے کیا کہ قریب ہی ایک مسجد تھی۔ اسی دن ،اے بی پی
نیوز کے اینکر روبیکا لیاقت نے اے بی پی کے آفیشل فیس بک پیج پر براہ راست گفتگو کرتے ہوئے اس کے دعوے کو جھوٹا
قرار دیتے ہوئے کہا کہ مسلم کمیونٹی وہاں جمع ہوگئی ہے۔ صرف ایک دن کے اندر ، اے بی پی گروپ نے ایک افواہ کی ،مسلم
برادری کے بارے میں گمراہ کن دعوی کیا اور اس کے بعد ،انہوں نے ان دعوؤں کو غلط انداز میں پیش کیا۔

مزدوروں کی خصوصی ٹرینوں میں مہاجر مزدوروں کی ہلاکت کے بارے میں اطلاعات کو حکومت کے حقائق چیکنگ ونگ پی
آئی بی فیکٹ چیک نے فرضی قرار دیا تھا۔ پی آئی بی نے دعوی کیا کہ متوفی یا تو پہلے کسی جسمانی پریشانی میں مبتلا تھے
یا حال ہی میں ان کا علاج ہوا تھا۔ لیکن پی آئی بی نے اپنے دعوؤں کو صحیح ثابت کرنے کے لئے کسی بھی میڈیکل رپورٹ کو
بطور ثبوت شیئر نہیں کیا۔ آلٹ نیوز نے پی آئی بی کے چار 'فیکٹ چیک' کا فیکٹ چیک کیا،ان میں سے تین بے بنیاد نکلے تھے۔
ایک اور حقائق کی جانچ پڑتال میں،پی آئی بی نے دعوی کیا ہے کہ اروینا خاتون نامی 23 سالہ خاتون، جو لیبر ٹرین میں جاں
بحق ہوگئی تھی،ایک طویل عرصے سے بیمار تھی۔ آلٹ نیوز نے اروینا کے والدین ، ​​دیوارانی اور بھائی سے بات کی۔ ان سب
نے حکومت کے دعوے کی تردید کی۔

یہاں تک کہ دیکھا گیا کہ جب ہندوستان کے سالیسیٹر جنرل نے واٹس ایپ فارورڈ کا سہارا لیا تاکہ وہ ان صحافیوں کو نشانہ
بنائیں جو مہاماری پرحکومت کو تنقید کا نشانہ بناتے ہیں۔

کووڈ 19 سے متعلق طبی معلومات متعدد مواقع پر بھرم پھیلاتی ہے۔
وبائی مرض کے دوران ،وائرس اور علاج سے متعلق بہت سی طبی غلط معلومات بھی لوگوں تک پہنچ گئیں۔ سب سے بڑی
گمراہ کن دعوے میں سے ایک ہومیوپیتھی کی دوائی ارسنیکم البم 30 سے ​​ایمونیٹی کو مضبوط بنانا تھا۔ ایک طرف،آیوش وزارت
نے یہ دوا لینے پر اصرار کیا،جب کہ کوئی تحقیق سامنے نہیں آئی ہے جس میں کہا گیا ہے کہ اس انفیکشن سے بچانے کے
لئے آرسنکیم البم 30 انسانوں یا جانوروں میں ایمونیٹی  کو بڑھا دے گی۔

وزارت آیوش نے بھی کاڑھی کو فروغ دیا ،اور یہ دعویٰ کیا کہ کوڈ 19 کو لڑنے کے لئے کاڑھی کو پینا چاہئے ، جو
ایمونیٹی  کو بڑھا دیتا ہے۔ آلٹ نیوز سائنس نے ایک رپورٹ بھی شائع کی ہے جس میں کہا گیا ہے کہ ہم میں ایمونیٹی برقرار
رکھنے کے لئے صحت مند طرز زندگی اپنانے کی ضرورت ہے۔ گولی کھانے یا کاڑھی پینے سے مدافعتی نظام کو تیزی سے
فروغ نہیں ملتا ہے۔ میڈیسن سائنس میں 'ایمونیٹی بوسٹر' کی کوئی بنیاد نہیں ہے،اس کے باوجود وزارت آیوش سمیت بہت
سارے ذرائع ابلاغ نے اس کو دہرانا جاری رکھا ہے۔

آلٹ نیوز سائنس نے آیور وید کے تجویز کردہ گھریلو علاج کے بارے میں بھی سچائی بتائی تھی۔ ان کے علاوہ کووڈ 19 سے
متعلق گمراہ کن دعوے ہوئے تھے ،جیسے کورونا وائرس بیکٹیری انفیکشن ہے ،ڈبلیو ایچ او نے دعوی کیا ہے کہ اسیمپومیٹک
مریض انفیکشن نہیں پھیلاسکتے ہیں اور کورونا وائرس انسان ساختہ وائرس ہے۔

بھارت چین متنازعہ کے بارے میں میڈیا نے غلط اطلاع فراہم کی
15 جون کو بھارت چین سرحد پر دونوں ممالک کے فوجیوں کے مابین ایک جھڑپ ہوئی تھی ،جس میں 20 ہندوستانی فوجی
ہلاک ہوگئے تھے۔ چینی حکومت نے ان کے جانی نقصان کے بارے میں کوئی معلومات فراہم نہیں کی۔ اس کے بعد میڈیا نے
اس سے متعلق جھوٹے دعوے کیے۔ اج تک نے 31 اگست کو مبینہ طور پر 'خصوصی' فوٹیج نشر کرتے ہوئے ایک سرحدی
محاذ آرائی میں 40 چینی فوجیوں کو ہلاک کرنے کا دعوی کیا۔ آج تک کے انگریزی ساتھی انڈیا ٹوڈے نے بھی یہی نشر کیا۔
ٹائمز نے دعوی کیا، "پی ایل اے کی 106 قبروں کی ایک تصویر میں یہ انکشاف ہوا ہے کہ 15 جون کو گالان میں ایک جھڑپ
میں کتنے چینی فوجی مارے گئے تھے۔" سوراجیا نے ٹائمز ناؤ کی اس رپورٹ کی بنیاد پر مضمون شائع کیا تھا۔ نیوز ایکس اور
اے بی پی نے بھی اپنی نشریات میں یہ دعویٰ کیا ہے کہ گالان کی جھڑپ میں ہلاک ہونے والے 30 سے ​​زائد چینی فوجیوں
کی قبریں دیکھی گئی ہیں۔

پتا چلا کہ جن قبروں کی فوٹیج ان چینلز نے دکھائی ۔وہ پی ایل اے کے فوجیوں کی قبریں تھیں جو 1962 کی ہند چین جنگ
میں شہید ہوئے،جنھیں کنگتکیسوا میں چینی فوج کی  قبریں تھیں۔
اس سے قبل ، کچھ مین اسٹریم میں شامل ذرائع ابلاغ اور صحافیوں نے دعوی کیا تھا کہ گالان میں اس جھڑپ میں '43 چینی
فوجی مارے گئے'۔ یہ دعوی اے این آئی کے ایک ٹویٹ پر مبنی تھا جس میں کہا گیا تھا کہ یہ معلومات 'ذرائع' سے موصول
ہوئی ہے اور یہ کہ 43 چینی جوانوں کے ہلاک ہونے کا دعوی کیا گیا ہے (جس میں ہلاک اور زخمی دونوں شامل ہیں) نہ ہی
چین کی طرف سے کوئی ڈاٹا مجموعی طور پر عام  کئے گئے،اور نہ ہی کسی بڑے دفاعی صحافی نے پی ایل اے کے
فوجیوں کی ہلاکت کے بارے میں کوئی تصدیق کی ہے۔ اس کے باوجود یہ خبر بڑے پیمانے پر وائرل ہوگئی۔
اس کے اگلے دن،ایک بار پھر،بغیر کسی ثبوت یا تصدیق کے ،کہا گیا کہ سرحدی تصادم میں 5 چینی فوجی ہلاک ہوگئے ہیں۔ ان
تمام 'خبروں' کا ماخذ ایک ہندوستانی اکائونٹ تھا،جس کے بعد بھارتی میڈیا اور صحافیوں نے اس غیر تصدیق شدہ معلومات کو
شیئر کیا۔

دریں اثنا،لوگوں تک پہنچانے والی سب سے بے وقوفی بھری رپورٹنگ تھی - ٹائمز ناؤ کے ایک واٹس ایپ فارورڈ میں دیئے گئے
نام کو پڑھنا اور انھیں تصادم میں مارے گئے چینی فوجیوں کو بتانا۔

آلٹ نیوز سے اسی مسئلے سے متعلق ایک اور دعوے پر رپورٹ کیا۔ کانگریس ممبران نے ،پینگونگ جھیل کے چین کے حصے
کی ویڈیو شیئر کرتے ہوئے دعوی کیا کہ چین نے جھیل کے ہندوستانی حصے میں سیاحت شروع کردی۔ ہم نے گوگل ارتھ اور
چینی ویب سائٹوں کی مدد سے اس مقام کی تصدیق کی اور یہ دعوی غلط ثابت کیا۔

کسان تحریک کو لیکر بہت سی غلط معلومات کی بھرمار
حکومت کی طرف سے لائے گئے 3 نئے زرعی قوانین کے خلاف مظاہروں کے بارے میں مسلسل غلط معلومات شیئر ہورہی
ہیں۔ بہت سارے لوگوں نے تحریک کو بدنام کرنے کے لئے پاکستان اور خالستان کی حمایت میں نعرے بلند کرنے کی بات کی۔
ان دعوؤں کو برطانیہ اور امریکہ کے پرانے ویڈیو شیئر کرکے فروغ دیا گیا تھا۔

یہ دعویٰ بھی کیا گیا کہ اس مظاہرے کے پیچھے مسلم کمیونٹی ہے، نہ کہ اصلی کسان ۔ مسلم  کمیونٹی کے ایک فرد پگڑی
پہنے شخص کی پرانی تصویر شیئر کرتے ہوئے کہا گیا کہ اس نے کسان بن کر مظاہرے میں حصہ لیا۔
اسی طرح ، 2011 کے ایک ویڈیو کو بھی جھوٹے دعووں کے ساتھ شیئر کیا گیا تھا۔

حکمراں پارٹی بھارتیہ جنتا پارٹی نے بھی 'خوش حال نظر آرہے کسان' کی تصویر دکھا کر اشتہار میں یہ ظاہر کرنے کی
کوشش کی کہ کسان نئے بل سے مطمئن ہیں۔ لیکن بی جے پی کے ذریعہ استعمال کیے جانے والے 'خوش نظر آرہے کسان'
کی تصویر سے یہ پتہ چلا کہ وہ سندھو بارڈر پر مظاہرے میں شامل  ہے۔
بی جے پی کے آئی ٹی سیل کے سربراہ امیت مالویہ نے ایک نامکمل کلپ شیئر کرکے یہ ظاہر کرنے کی کوشش کی کہ پولیس
مظاہرین پر اتنی توڑ پھوڑ نہیں کررہی ہے جتنا لوگ دکھا رہے ہیں۔

'لو جہاد' کو قانونی حیثیت دینے کی کوشش
اترپردیش کی حکومت نے مبینہ 'لو جہاد' کو روکنے کے لئے مذہب تبدیل کرنے کا قانون نافذ کیا۔ اس کے بعد ،سوشل میڈیا
صارفین نے خواتین پر تشدد کی بہت سی پرانی ویڈیوز اور ویڈیوکلپس شیئر کیں اور مسلم کمیونٹی پر الزامات لگانا شروع
کردیئے۔

ایک پرانے سوٹ کیس میں عورت کی لاش برامد ہونے پر،لوگوں نے بتایا کہ اس مسلمان شخص نے محبت کے جال میں
پھنسنانے کے بعد اسے قتل کیا۔ دراصل ،وہ عورت خود مسلم کمیونٹی کی تھی اور یہ معاملہ مبینہ 'آئنرکیلنگ' کا تھا۔
اسی طرح بنگلہ دیش میں گھریلو تشدد کی ویڈیو بھی اسی طرح کے جھوٹے دعوؤں کے ساتھ شیئر کی گئی تھی۔

برازیل میں ایک خاتون کے قتل کی ویڈیو کو ہندوستانی سوشل میڈیا صارفین نے 'لو جہاد' کے زاویے کے ساتھ شیئر کیا ہے۔
مدھیہ پردیش میں حکمران جماعت کے مسلم مخالف رویہ اور بھرم پھیلانے والے  پوسٹ کو بڑھاوا دینے کا یہ نتیجہ ہے کہ
بھوپال میں ایک ہندو گروہ کے لوگ سالگرہ کی تقریب میں داخل ہوئے اور ان کی ویڈیو بنانا شروع کردی۔ پارٹی میں لڑکے اور
لڑکیاں شامل تھے۔ کچھ لڑکے مسلم برادری سے بھی تھے۔ اس مسئلے کو پیش کرتے ہوئے،ان لوگوں نے 'لو جہاد' کا دعوی
کیا۔

سال 2020 سی اے اے کے پہلے مخالف مظاہروں کے دوران کسانوں کی تحریک میں اقلیتی برادریوں - مسلمانوں اور اس
کے بعد سکھ برادری کے افراد کے خلاف پروپیگنڈہ کرنے کا سال تھا۔ لیکن جس سطح پر مسلم برادری کو بدنام کیا گیا وہ
انتہائی تشویشناک ہے۔ اس برادری کو کورونا وائرس پھیلانے کا ذمہ دار ٹھہرایا گیا اور مین اسٹریم میں آنے والی میڈیا کی '
خبروں' نے فرضی انٹرویو کو بڑھانے میں کوئی کسر نہیں چھوڑی۔ سال ختم ہوا ، کسان تحریک چل رہی ہے دوسری طرف
مغربی بنگال اسمبلی انتخابات بھی 2021 کی دہلیز پر ہیں۔ ایسی صورتحال میں لگتا ہے کہ فرضی معلومات پھیلانے کا عمل
دور دور تک کم ہوتا  ۔نظر نہیں  آرہا  ہے۔
بشکریہ:altnews

Original text