23:51:21
زبیر الرحمن ( ببن میاں ) نے اپنی گوشالہ کا نام بھگوان کرشن کے نام پر رکھا، کہا گنگا جمنی تہذیب میں یقین 
 77
31 Jul, 2020 07:52 pm

بلند شہر: اترپردیش کے بلند شہر کے زبیر الرحمن نے سڑک پربھٹکتے والی آوارہ گایوں کے لئے ایک گوشالہ تعمیر کی ہے اور وہ خود ان گایوں کی خدمت کرتے ہیں۔
گایوں کی خدمت کرنا ان کے خاندان کی پہچان بن گئی ہے۔
 انہوں نے اس گوشالہ کا نام بھگوان کرشن کے نام پر رکھا ہے۔زبیرالرحمن کے پاس 40 ایکڑ اراضی ہے،جس میں آم کے باغات کے ساتھ وہ ریل اسٹیٹ کا بھی کام
کرتے ہیں اس کے علاوہ دہلی میں ان کی  برتنوں کی ایک فیکٹری بھی ہے۔
کروڑوں روپے کی آمدنی ہونے کے باوجود،زبیرالرحمن ہفتے کے آخر میں مدھوسودن گوشالہ میں خود 65  گایوں کی دیکھ بھال کرتے ہیں۔انہوں نے یہ گوسالہ بلند
شہر کے ضلع چاندیانہ گاؤں میں تعمیر کی ہے۔
وہ 'ببن میاں' کے نام سے مشہور ہیں۔ انہوں نے اپنی والدہ حمید عن نیسہ خانم کی خواہشات کو  پورا کیا ہے۔ انہوں نے گایوں کی حفاظت اور گنگا ندی کو ماں محبت
انہوں نے اپنی ماں سے ملی ہے۔
انہوں نے کہا ، "میری والدہ نے اس بات کا یقین دلایا کہ بیمار گایوں کا علاج ہو گیا ہے۔وہ ہمیشہ پوچھتی ہیں کہ اس کام کو جاری رکھ سکیں گے۔ ہمیں نہیں معلوم
کہ انہیں کہاں سے دلچسپی ملی لیکن یہ ہمارے خاندان کی پہچان بن گئی ہے۔"
 چاندیانہ ان 12 گاؤں میں سے ایک ہے ،جسے بارہ باسی (12 بستی) یہ پٹھانوں کی بستی کے نام سے جانا جاتا ہے۔بلندشہر کی سائنا تحصیل میں آتی ہے ۔
شیر شاہ سوری کے دورِ حکومت میں،اس خان نیازی کے ساتھ کچھ پٹھان خاندان ہندوستان آئے اور یہیں مقیم ہوگئے تھے۔ شیر شاہ سوری نے 16 ویں صد میں شمالی
ہندوستان میں سوری سلطنت قائم کی۔
  زبیر الرحمن  نے کہا ، "ہم گنگا - جمنی تہذیب پر یقین رکھتے ہیں۔ ہم نے گوشالہ کا نام بھگوان کرشن کے نام پر رکھا ہے (مدھوسودن بھگوان کرشنا کا ایک نا ہے)۔ اس
سے مجھے کوئی فرق نہیں پڑتا ہے کہ میں کچھ ایسا کرتا ہوں جو ہندو کرتے ہیں مجھے کچھ رشتہ داروں کی طرف سے بھی دشواری کا سامنا کرنا پڑا ہے ، لیکن زیادہ
تر لوگوں نے اس کام کی تعریف کی ہے۔انہوں نے کہا ، "ہم یہ بھی مانتے ہیں کہ ہم گائے کی خدمت کرتے ہیں ،لہذا اللہ نے ہمیں سب کچھ دیا۔ ابتدا میں 5-10 گائیں
تھیں اوراب 65 گایوں ہو گئیں۔" 
ان کے ایم بی اے بیٹے عمیر نے کہا  کہ وہ ہندو مسلم امتیاز کے بارے میں نہیں سوچتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ہمارے گھر کے قریب گنگا کے کنارے ایک مسجد ہے۔ ہم گنگا کے پانی سے وضو کرتے ہیں اور پھر نماز پڑھتے ہیں۔
زبیر الرحمن نے کہا ، "گوسالہ کو چلانے کے لئے پیسوں کی ضرورت پڑتی ہے۔ گائے کا دودھ بیچ کر ایک لاکھ روپے مل جاتے ہیں جب کہ باقی رقم میں اپنی جیب سے
دیتا ہوں۔ میرے کچھ دوستوں نے مجھے مشورہ دیا کہ ہم کچھ ڈیری والی گائیوں کو لے لے تاکہ لاگت نکل سکے ۔ پہلے یہاں صرف سڑک پر  بھٹکنے والی گائیں بھٹک
ہوتی تھیں۔ "
انہوں نے کہا ، "اسلام گائے کے گوشت کے استعمال کی ممانعت نہیں کرتا ہے۔ لیکن ہم گائے کا دودھ پیتے ہیں،ہم اسے کھانے کے لے کیسے مار سکتے ہیں اور اس کے خلاف قانون بھی ہے اور ہمیں قانون پر عمل کرنا چاہئے۔"

As:abplive
 

Original text